تولیدی نظام جسم میں خاص اہمیت رکھتا ہے ۔ اس کے بغیر جسم درست طریقے سے کام نہیں کر سکتا۔
خواتین کو ضرورت ہوتی ہے کہ وہ اپنی مجموعی صحت کے ساتھ ساتھ اپنے تولیدی نظام کا بھی خیال رکھیں تاکہ آنے والی زندگی میں کسی مشکل یا دشواری کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔اکثر خواتین اس معاملے میں لا پرواہی کا مظاہرہ کرتی ہیں اور بعد میں پچھتاتی ہیں ۔ تولیدی نظام درست رکھنے کے لیے مندرجہ ذیل نسخوں پر عمل کریں
ایسی غذائیں جن کی تاثیر گرم ہو ،رحم کو تقویت دیتی ہیں اور بیضہ دانی میں انڈوں کی تعداد بڑھاتی ہیں

۔ کولین ایک اہم غذائی جزہے جو کہ حمل کے دوران بچہ میں ہونے والے نقائص کو روکتا ہے ۔بہت سی خواتین میں کولین کی کمی کی وجہ سے تولیدی نظام میں گڑ بڑ پیدا ہو جاتی ہے۔ روزانہ ایک انڈہ کھانے سے کولین کی کمی پوری ہو سکتی ہے ،انڈے کی زردی میں کولین بڑی مقدار میں پایا جاتا ہے اس کے علاوہ کلیجی اور پھول گوبھی بھی کولین حاصل کرنے کا اہم ذریعہ ہیں

۔ دن بھر کی کیلوریز اگر سیچوریٹڈ فیٹ کے بجائے میووں ،سبزی اور دالوں سے حاصل کی جائیں تو ہار مونز صحیح کام کرتے ہیں ۔
۔ آدھا چمچ تلوں کا سفوف گرم پانی کے ساتھ دن میں دو دفعہ لینے سے حیض کی کمی دور ہوتی ہے
۔ بھنے ہوئے چنے اور ہم وزن مغز ،بادام اور شکر چبانا تولیدی صلاحیت بحال کرنے میں معاون ثابت ہوتا ہے ۔
۔ اعصابی کمزوری کے نتیجے میں ضائع ہونے والی جنسی توانائی اور تولیدی صلاحیت بڑھانے کے لئے بادام بہت مفید ہیں
۔ سورج کی شعائیں وٹامن ڈی حاصل کرنے کا بہترین ذریعہ ہیں ۔تحقیق نے یہ بات ثابت کی ہے جن خواتین میں وٹامن ڈی وافر مقدار میں موجود ہوتا ہے ان خواتین میں ہارمونز تیزی سے کام کرتے ہیں جس سے تولیدی نظام درست رہتا ہے ۔
۔ اپنی غذا میں پروٹین ،وٹامن اور معدنی عوامل کو مناسب مقدار میں ضرور شامل کریں ۔
۔ ایسی خواتین جو ذیابیطس اور دل کے امراض میں مبتلا ہیں اور صرف سبزیاں کھاتی ہیں انھیں امراض نسواں کے ماہر سے قفے واقفے سے اپنا چیک اپ کراتے رہنا چاہئے ۔
۔ ایسی خواتین جن کے ہاں پہلے ہی کم وزن کے بچے پیدا ہوتے ہوں انھیں ا پنا معائنہ کراتے رہنا چاہئے ۔
۔ اومیگا خواتین کے تولیدی نظام کو تقویت بخشتتا ہے ۔اومیگا حاصل کرنے کا بہترین ذریعہ مچھلی ہے ۔حمل سے پہلے اگر مچھلی کا استعمال کیا جائے تو اسقاط حمل کا خطرہ کم ہو جاتا ہے
۔ وٹا من بی اور فولک ایسڈ اور سیلینیم خواتین کے لئے مفید ہوتے ہیں۔
۔ فا لسہ ٹماٹر اور کیلا کھانے سے بچہ دانی مضبوط ہوتی ہے اور بانجھ پن دور ہوتا ہے۔
۔ اگر بچہ دانی کمزور ہو تو تولیدی نظام کمزور ہو جاتا ہے ایسے میں سنگھاڑا کھانے سے فائدہ ہوتا ہے ۔
۔ پستے میں وٹامن ای ہو تا ہے جو نہ صرف تولیدی طاقت کو بڑھاتا ہے بلکہ حمل گرنے سے بھی روکتا ہے ۔
۔ ہارورڈ یونیورسٹی میں ہونے والی تحقیق نے یہ ثابت کیا ہے کہ جو خواتین دودھ اور اس سے بنی ہوئی اشیا کا استعمال کرتی ہیں ان کی بیضہ دانی زیادہ بہتر طور پر کام کرتی ہیں ۔
۔ پانی زیادہ پینا چاہئے جس سے پیشاب کی جلن نہیں ہوتی ،پیشاب کی جلن اور مثانے کی بیماریاں بھی انڈے نہ بننے کا سبب ہو سکتی ہیں ۔
۔ وزن بڑھنے نہ دیں ۔ورزش ،چہل قدمی ہارمونز کی کارکردگی دبڑھاتی ہے ۔
خواتین و حضرات اپنی پیچیدہ سے پیچیدہ بیماریوں جیسے ٭بانجھ پن /بے اولادی(Sterility)
٭عجیب الخلت،اپائج اور ہر بار مردہ بچوں کی پیدائش اور بار بار حمل کا ضائع ہوناکے مکمل علاج کیلیے۔
٭حیض کا درد کے ساتھ آنا (Dysmenorrhoea)٭حیض کا قبل از وقت آنا (Polymenorrhoea)
٭بندش حیض (Amenorrhoea)٭کثرت حیض (Menorrhagia)
٭ خون کی کمی(Anemia)٭ذہنی ،نفسیاتی اور جذباتی امراض
٭جسمانی ،پیٹ کی رسولیوں،سسٹ ،بواسیر،پتھریوں ،شیاٹیکاکمروگردن کمر کے مہروں کا بغیر آپریشن علاج
٭موثر اور محفوظ ادویاتی علاج،بہترین نتائج، زندگی کی خوبصورتی آپریشن اور نشہ آور ادویات کے بغیر ممکن۔
٭جدید طبی آلات،آکوپنکچر ،ریڈیونک کمپیوٹر،ہر کیس پرخصوصی توجہ ،کم سے کم وقت میں علاج اور زندگی میں خوشیوں کی بہاریں،ایمپورٹڈ میڈیسن اور ورلڈ کلاس ہومیو پریکٹس۔
آزمودہ اور یقینی علاج کیلیئے
سمیلیہ ہومیو کلینکس
ایبٹ آباد کلینک :چائنہ سنٹر دی مال ایبٹ آباد
فون نمبر: 0992-340044

www.similiaclinix.com
www.facebook.com/similiadotclinix
drahmedejaz@gmail.com
اوقات کار:صبح  9:00سے شام 7:00تک
آنے سے پہلے فون پر نمبر ضرور لیں
0333-8001011 0345-9590044

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

YouTube
YouTube
Instagram
WhatsApp